Guzaarish

May 25, 2012 - Less than a minute read

144/365



سنو
یہ جو راستے ہیں راستوں کی تلاش میںٖ،
انہیں فرار دو…
یہ جو خود سری کا شوق ہے ہواؤں کو،
انہیں قرار دو…
یہ جو برف سی جمی ہوئی ہے رگٍ جان پر،
اٍسے چراغ اپنا اْدھار دو…
یہ جو ہجوم ہے خودغرضی کے سایوں کا،
اْسے مار دو…
یہ جو خوابوں کا چمن ہے تیری آنکھ میں،
کسی روز اٍسے بہار دو…
یہ جو وخشت کا لبادہ ہے تیرے شہر پر،
اٍک دن اٍسے اْتار دو…

ہمیں پیا ر دو
ہمیں پیا ر دو

Written by: Zunaira Afzal

Photo Credits: A.Ech

Tags: , , , , , ,